پاک مقرب فرشتوں کی عید

29ستمبر2021
فادر مرقس ڈانئیل او۔پی
تعارف:
عزیز مومنین!آج کی پاک لطوریا میں پاک ماں کلیسیا تین مقرب فرشتوں کی تعظیم میں عید کی عبادت گزرانتی اور اُنہیں یاد کرتی ہے۔ لفظ فرشتہ یا ملوک یا پھر ملائیک کے لفظی معنی ہیں ”پیغام رساں“ ہم فرشتوں کی موجودگی پر ایمان رکھتے ہیں کیونکہ خُداوند یسوع مسیح بھی ان پر ایمان اور یقین رکھتے تھے۔مسیح یسوع نے فرشتوں کی موجودگی کی تعلیم دی ہے۔فرستے کون ہیں؟ فرشتے آسمانی واوحانی مخلوق ہیں انکا درجہ انسان سے بُلند ہے۔ انسان کو فرشتوں سے کچھ کمتر درجہ دیا ہے۔وہ خُدا کے خدمت گار ہیں اور اُسکی بڑائی کرتے رہتے ہیں خُدا نے تخلیق کے کام میں فرشتوں کو پہلے خلق کیا۔
انجیلیکل ڈاکٹر مقدس تھامس اکیوانیس کہتے ہیں کہ مخلوقات میں ایک ترتیب اور نظام ہے جس کا خالق خدا خود ہے۔ ان کے مطابق سب سے پہلے خُداخالق ہے پھر فرشتے، انسان، جانور، پودے اور درخت و نباتات فرشتے انسانوں سے افضل ہیں کیونکہ وہ پاک ہیں۔ وہ ہمیشہ خُدا کا دیدار کرتے ہوئے اُسکی ستائش کے گیت گاتے ہیں۔
1۔کلام مقدس اور فرشتے:
کلامِ مقدس میں فرشتوں کے بارے بہت کچھ بیان ہے۔ مقدس یوحنا کا مکاشفہ ۱:۳ اور کلسیوں ۱: ۶ کے مطابق خُدا سب چیزوں کا خالق ہے اور وہ فرشتوں کا بھی خالق اور مالک ہے۔ اور کہ یہ فرشتگان آسمان اور زمین کی تخلیق سے پہلے بنائے گے۔ یہ بات حقیقت پر مبنی ہے کہ فرشتوں میں شادی بیاہ نہیں ہوتی۔تولید ی نظام نہیں ہوتا۔ یہ آسمانی اور فلکی ہیں وہ نر و ناری نہیں بلکہ روحانی مخلوق ہیں۔ یہ غیر فانی ہیں لیکن ہمہ دان نہیں صرف باتیں ہی جانتے ہیں۔ وہ محدود ہیں۔ فرشتے خُدا کے حکم، اختیار، مکاشفہ اور قوت سے کام کرتے ہیں۔ وہ قوت اور ذات میں انسانوں سے بالا تر ہیں۔ وہ آسمانی ہیں اور زمین اور آسمان پر آ جا سکتے ہیں۔ باپ نے انہیں ایسااختیار دے رکھا ہے۔ اور ان کو پاک کہا گیا ہے۔ گو کہ یہ کردار میں بلند لیکن خُدا سے کم تر ہیں (عبرانیوں ۲:۷)۔ یہ روحیں ہیں (عبرانیوں ۱:۴۱)۔ یہ آسمانی مخلوق ہیں (متی۴۲:۶۳)۔ فرشتکان مادی بدن نہیں رکھتے لیکن انسانی روپ دھار سکتے ہیں (لوقا ۴۲:۴۱)۔ اِ ن کی تعداد بہت کم ہے (متی ۵۲: ۱۳)”جب ابنِ انسان اپنے جلال میں آئے گا اور فرشتے اُس کے ہمراہ ہونگے تب وہ اپنے تخت جلالی پر بیٹھے گا“۔
2۔ مقدس تھامس اکوائنس کی الٰہیات (Summa):مقدس تھامس اپنی الہیات میں فرشتوں کے کام اور فرائض کی وضاحت کرتے ہیں۔ اعلیٰ ترین درجہ کے فرشتے ہمیشہ خُدا کی حضوری میں حاضر رہتے اور اُسکی تمجید کرتے ہیں خُدا کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے اُسکے ارادے اور مشورے پر دھیان و گیان کرنے کی صلاحیت کے ساتھ خُدا کی تمجید و توصیف بیان کرتے ہیں۔
بقول مقدس ٹامس فرشتوں کا بنیادی فریضہ خُدا کی حضوری میں رہتے ہوئے اُسکی پاک مرضی کو جاننا سمجھنا اور اُسکی ستائش کرتے ہوئے اُسکی مرضی کو بجا لانا ہے۔ بالفاظ دیگر فرشتے مکمل طور پر خُدا کی تابعداری کرتے اور اُسکے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے رضائے الٰہی کو انسانوں تک بھی پہنچانے کا فریضہ انجام دیتے ہیں۔
کلام مقدس میں ایسے واقعات اور چند ایسی ہستیوں کا واضح ذکر ملتا ہے۔ جن کے پاس خُدا کی طرف سے مخصوص فرشتہ بھیجا گیا اور وہ ایک خاص پیغام دینے کے ساتھ خُدا کی قوت اور اُس کی پاک مرضی کو بھی اُن پر عیاں کرتا ہے۔ مثلا ً حضرت ابراہیم، موسیٰ اور دوسرے انبیاء کو بھی فرشتے کی معرفت خُدا کی حمایت اور اُسکی قوت کا یقین دلایا گیا۔(خروج 23:20) میں : ’ؔ خُداوند فرماتا ہے۔”میں تیرے آگے آگے ایک فرشتہ بھیجتا ہوں جو راہ میں تیری حفاظت کرے گا۔ ۔۔۔ تو اُس کے آگے ہوشیار رہنا“۔
3۔ فرشتوں کی خدمات و درجات:
مقدس گریگری اعظم فرشتوں کی خدمت یا (Office) کے لحاظ سے ان میں پورا امتیاز بیان کرتے ہیں کہ وہ جو چھوٹی خوشخبری سُناتے ہیں وہ فرشتے مگر جو کوئی خاص خوشخبری دیتے ہیں وہ بزرگ یا مقرب کہلاتے ہیں۔ بائبل مقدس میں کم ازکم تین بزرگ فرشتوں کے نام اُنکے کام یا خدمت کو عیاں کرتے ہیں یہ مقرب فرشتے ہیں۔ جبرائیل، رافاعیل اور میکائیل ہیں۔ یسوع المسیح کی پیدائش کی خوشخبری کنواری مریم کو جبرائیل فرشتے کی معرفت دی گئی۔ یہی فرشتہ یوسف کو آگاہی دیتا ہے کہ وہ مریم کو جو خُدا کے بیٹے کی ماں بنے گی اسے قبول کرنے سے نہ ڈر ے۔ یوسف کو خواب میں فرشتے نے آگاہ کیا کہ اُسکی ہونے والی بیوی کنواری مریم سے روح القدس کی قدرت سے بیٹا پیدا ہوگا۔
”وہ ان باتوں کی سوچ ہی میں تھا کہ دیکھو خُداوند کے فرشتے نے اس پر خواب میں ظاہر ہو کر کہا۔ اَے یوسف داؤد کے بیٹے اپنی بیوی کو اپنے پاس لے آنے سے مت ڈر کیونکہ جو اس کے اندر پیدا کیا گیا ہے وہ رُوح القدس سے ہے“ (متی ۱:۰۲)
سب سے عظیم خوشخبری جو کسی اعلیٰ انسانی ذات کو دی گئی وہ جبرائیل فرشتے نے مقدسہ کنواری مریم کو نجات دہندہ کی ماں بننے کی خوشخبری دی تھی اس لئے جبرائیل فرشتہ پہلے مریم کو سلام پیش کرتا ہے پھر اُسے مبارک کہتا ہے۔ ”تُو عورتوں میں سے مُبارک ہے“۔
فرشتے کے بعد الصابات بھی مریم کو مبارک کہتی ہے۔ ”میرے لئے یہ کیسے ہوا کہ میرے خُداوند کی مبارک ماں میرے پاس آئی“۔ ۔۔۔ اور مُبارک ہے وہ جو ایمان لائی“۔ ۔۔۔ الصابات کے بعد ہر زمانے کے لوگ اور ہم بھی اُسے مبارک کہتے ہیں۔
درجات کے لحاظ سے
پہلا مقرب فرشتہ میکائیل ہے جس کے معنی: ”کون خُدا کی مانند طاقت ور ہے“
دوسرا مقرب فرشتہ جبرائیل ہے جس کے معنی: ”خُدا کی قوت“
تیسر ا مقرب فرشتہ رفاعیل جس کے معنی: ”خُدا شفا ہے یا شفا دیتا ہے“۔
مقرب فرشتوں کے کام:
مکائیل فرشتہ: یہ فرشتہ شیطان سے لڑتا ہے اور انسانوں کو تحفظ فراہم کر تا ہے۔
جبرائیل فرشتہ: جسکا لفظی مطلب خُدا کی طاقت یا قوت۔ یہی وہ پاک فرشتہ ہے جس نے مقدسہ مریم کو سلام پیش کیا۔ کلامِ مقدس میں یہ تین جگہوں پر بطور خُدا کا پیغام رساں بن کر ظاہر ہوا ہے۔
رفائیل فرشتہ: رفائیل کا مطلب کہ خُدا شفا دیتا ہے۔اس فرشتہ کی موجودگی کا اندازہ ہمیں توبیا ھ کی کتاب سے ملتا ہے۔ اس فرشتے کا خاص کا م یا مشن بیماروں کو شفا دینا ہے۔
فرشتے دو اقسام کے ہیں:
اول: وہ فرشتے جو خُدا کے خاص مقاصد پورا کرتے ہیں۔ پاکیزگی رکھتے ہیں۔ اور فرمانبردار ہیں۔ یہ خُدا کا پیغام زمین پر اور زمین کا پیغام خُدا تک لے جاتے ہیں۔
دوئم: یہ بانفیس نفیس جاگنے کی حالت یا خواب کی حالت میں ظاہر ہوتے ہیں (یوحنا ۱:۷۴۔۱۵)، (لوقا ۱:۸۲)۔
اِن کی خدمات تین حصوں میں منقسم ہے۔
۱۔ خُدا کی خدمت:
یہ خُدا کی خدمت شب و رو ز کرتے ہیں۔ خُدا کی عبادت کرتے ہیں۔ خُدا کی حضوری میں کھڑے رہتے ہیں۔
آخرت کی خدمت میں شامل ہوتے ہوئے یہ شریروں اور راستبازوں کو الگ کرتے ہیں۔
۲۔ مسیح یسوع کی خدمت کرتے ہیں۔
پاک فرشتے خُداوند یسوع مسیح کی اعلانیہ زندگی میں جنگلوں میں یسوع کی خدمت کرتے ہیں۔
۳۔ انسانوں کی خدمت کرتے ہیں۔
مقدسہ مریم اور حضرت یوسف کی خدمت کرتے ہیں۔ وھ ھم انسانوں کی بھ۔۔۔خدمت کرتے ھیں۔
نتیجہ:المختصر فرشتوں کا کام خُدا کی حضوری میں اُسکا دیدارکرنا، اُسکی ستائش کرنااور اُسکی تابعداری میں ہر پل کمربستہ رہنا ہے۔
مقرب فرشتوں کی ذمہ داری خُدا کے پیامبر بن کر انسانوں تک اُس کا پیغام و لہام لے کر جانا ہے۔ مقرب فرشتے مائیکل کا خاص کام شیطان اور بُرائی کے خلاف جنگ کرنا اور اُسے مصلوب کرنا ہے۔ جبرائیل فرشتہ مقدسہ کنواری کے پاس نجات دہندہ کی خوشخبری دینے کیلئے بھیجا گیا۔ حضرت یوسف پر بھی وہ ظاہر ہوا۔ رافاعیل فرشتہ خُدا کی طرف سے شفا دینے کیلئے بھیجا گیا، نیز طوبیاہ کے ہمراہ اُسکی راہنمائی اور حفاظت کیلئے بھی مقرر کیا گیا۔
مسیح یسوع اپنے بارے میں فرماتے ہیں کہ ”تم ابنِ انسان پر فرشتوں کو اُترتے اور اُوپر جاتے دیکھو گے۔“۔۔۔
مقرب فرشتے اگر پیغام رساں ہیں تو یسوع المسیح خُدا کا مکمل مکاشفہ اور و ھ ئاس کا کامل پیامبر ہے۔ کیونکہ وہ انسانی روپ میں خُدا ہے۔
یوحنا کی انجیل کے آخر میں خُداوند یسوع نے اپنے شاگردوں کو فرمایا: ”جس طرح باپ نے مجھے بھیجا ہے اُسی طرح میں بھی تمہیں بھیجتا ہوں اور اُس نے یہ کہہ کر اُن پر پُھونکا اور کہا کہ تم رُوح االقدس لو“۔(یوحنا ۰۲:۱۲۔۲۲)
مسیح یسوع نے اپنے شاگردوں کو اور ہمیں بھی اپنے رُوح القدس سے نوازا ہے اور اپنے پیامبر بنا کر بھیجتا ہے۔ چنانچہ ہم سب بلائے گئے ہیں کہ بطور یسوع کے شاگرد اُسکی خوشخبری پوری دنیا تک لے کر جائیں۔ مقرب فرشتوں کی عید ہمیں اپنی خاص بلاہٹ اور ذمہ داری کی یاد دھانی کرواتی ہے۔پاک رو ح ھمارے ساتھ ر ھے تاکھ ہم بھی اُنکی طرح خُدا کی تابعداری کرتے ہوئے اُسکے سچے پیامبر بنیں۔ ٓامین
آپ سب کو مقرب فرشتوں کی عید بہت بہت مبارک ہو!
…………)٭O٭(…………

Samson

Read Previous

مقرب فرشتے

Read Next

مقدس جیروم : معلم کلیسیاؔ

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے