شارون ولسن کی ایف آئی آر درج

0
114

کراچی اعظم بستی سے تعلق رکھنے والا17 سالہ مسیحی نوجوان شارون ولسن کی ایف آئی آر والد ولسن اقبال کی مدعیت میں درج۔

کراچی (ناصر رضا) تفصیلات کے مطابق شارون کے ساتھ پیش آنے والے واقعے کے بعد مورخہ 17 مومبر 2020 چند عیاش لڑکوں نے اعظم بستی گلی نمبر 8 سے اس کو تقریبا 11 بجے رات کو اسلحہ کے زور پر اپنے ساتھ لے کے جانے کی کوشش کی جس پر اعلی محلہ چند بااثر لوگوں نے پولیس کو اطلاع دی دو عیاش لڑکوں کو پولیس کے حوالے کردیا ۔جب لڑکے سے پوچھا گیا کہ پہلے بھی کبھی کچھ ایسا ہوا ہے تو شارون نے بتایا آج سے دو سے تین ہفتے پہلے مجھے یہ لڑکے میرے کسی دوست کے ساتھ کالاپول کی سائیڈ پر لے کر گئے اور میرے کپڑے اتار کر زبردستی میری ننگی ویڈیو بنائی اور مجھ سے کہا اگر تم نے کوئی کرسچن لڑکی ۔ جس کی عمر دس سے بارہ سال ہو ہمیں لا کر دو ورانہ تمہارے ساتھ یہ سب کچھ ہم کریں گے ۔جس پر شارون ولسن بہت پریشان ہوا دو سے تین ہفتے گزر جانے کے بعد 16 نومبر 2020 کو تقریبا ساڑھے گیارہ بجے اعظم بستی گلی نمبر 8 سے اس کو اسلحہ کے زور پر اغوا کرنے کی کوشش کی گئی اہل محلہ نے شورشرابا کرکے پولیس کو بلایا ان خیالات کا اظہار شارون ولسن اور اس کے والد ولسن اقبال نے ناصر رضا کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا اور مزید بتایا کے دو ملزمان کو پولیس کے حوالے کردیا ۔مورخہ 18 نومبر 2020 کو جب تھانہ محمود آباد کے ایس ایچ او کے پاس گئے وہاں کا ماحول ہی دوسرا بن گیا اور صلح صفائی کی طرف بات جوکی تو ہوگی ۔لیکن آج ایس پی فاروق صاحب کے کہنے پر ایس ایچ او محمودآباد اعجاز نے شارون ولسن کی ایف آئی آر درج کی اور ملزمان کو گرفتار کرنے کے آرڈر جاری کیے ۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں